ابھی کچھ دن لگیں لگے

ابھی کچھ دن لگیں لگے راستوں کو بھول جانے میں دلِ ناکام سے ساری وفائیں خود مٹانے میں ابھی تو رات کی سیاہ کاری ہے…

ادامه مطلب

اے ہوا اُسے کہنا

اے ہوا اُسے کہنا بہت ہی دور کہیں ڈھلتی چاندنی میں اکیلا بیٹھا کوئی ایک تصویر سے باتیں کیا کرتا ہے امجد شیخ

ادامه مطلب

خواب سارے بکھر گئے

خواب سارے بکھر گئے وہ جو رات تھی وہ ڈھل چکی جو شام تھی وہ اُتر چکی اب اندھیرا مرے نصیب کا وہ اُجالا صبحِ…

ادامه مطلب

حوصلہ جب بھی اسکا بکھر گیا ہو گا

حوصلہ جب بھی اسکا بکھر گیا ہو گا چاند سا چہرہ اور نکھر گیا ہو گا اب کے برسات کے موسم سے میں تو کیا…

ادامه مطلب

دل اُداس رہتا ہے

دل اُداس رہتا ہے بارشوں کے موسم میں بن تمہارے اب جاناں آسماں برستا ہے لوگ ساتھ ہوتے ہیں پیار کے جزیرے میں میں بہت…

ادامه مطلب

دل لگانا نہ دل لگی کرنا

دل لگانا نہ دل لگی کرنا تم زمانے کی پیروی کرنا شام کے بعد پر ہجوم یادوں سے بجھتے دل سے ،ہم کو ہے روشنی…

ادامه مطلب

کاش کبھی تو ایسا ہو

کاش کبھی تو ایسا ہو کہ میرے جسم سے لپٹی کوئی حسیں لڑکی مری زباں میں کہے بہت محبت ہے تم سے مجھے یا کبھی…

ادامه مطلب

چپ رہنا عادت ہے

چپ رہنا عادت ہے مجبور محبت ہے جو آج اکیلا ہوں یہ دل کی شرارت ہے اک برف کے آدم میں شعلوں سی حرارت ہے…

ادامه مطلب

میری ماں

میری ماں تم نے تو مجھ کو لکھا تھا بہت امید ہے تم سے سکون سے بیٹا اپنی تعلیم پر توجہ دو اور میرے بارے…

ادامه مطلب

وفا کو ڈھونڈنے نکلو، تو مجھ کو پائو گے

وفا کو ڈھونڈنے نکلو، تو مجھ کو پائو گے تیری تلاش میں ، میں تم سے بہت دور ہوا اب شام ہو چکی وہ جو…

ادامه مطلب

ہے ساتھ سدا رہتی تنہائی گلیوں میں

ہے ساتھ سدا رہتی تنہائی گلیوں میں اپنے دُکھ کی ایک ہی ساتھی گلیوں میں اُس سے شائد کوئی یہیں پر بچھڑا تھا وہ پگلی…

ادامه مطلب

ہجر راتوں کے زمانے آئے

ہجر راتوں کے زمانے آئے اب میرے ہوش ٹھکانے آئے لبِ دریا کھڑا یہ سوچتا ہوں کاش تو پیاس بجھانے آئے پہلے خواہش سی بدن…

ادامه مطلب

آخری رات

آخری رات بس عذاب ہوتی ہے ہزار ہا برس سے طویل اک رات! کہیں حسین سے رشتے کا دائمی بندھن اک رات! کہیں پر موت…

ادامه مطلب

وہ کانچ جیسے بدن کی گرمی وہ اُسکے لمس کی حرارتیں

وہ کانچ جیسے بدن کی گرمی وہ اُسکے لمس کی حرارتیں مجھے یاد ہیں اب بھی تمام وہ پچھلے برس کی شرارتیں تمہیں وہ منزلیں…

ادامه مطلب

آج کے بعد میرے گھر میں

آج کے بعد میرے گھر میں کبھی شام نہیں آئی گی آج کے بعد ہوا کوئی پیغام نہیں لائے گی نہ تمہاری یاد مجھے رات…

ادامه مطلب

جب میری آنکھ سے ٹوٹا ہوا تارہ دیکھا

جب میری آنکھ سے ٹوٹا ہوا تارہ دیکھا چشمِ حیراں سے شہر نے یہ نظارا دیکھا چاندنی لوٹ گئی مایوس اندھیرے گھر سے آج پھر…

ادامه مطلب

اپنی تنہائی کے قصے ہیں

اپنی تنہائی کے قصے ہیں آنسو گہرائی کے قصے ہیں راکھ سے پروانے کی عیاں شمع ہرجائی کے قصے ہیں میرے گھر سے اُسکے گھر…

ادامه مطلب