یاد ہے شادی میں بھی، ہنگامۂ _یارب_، مجھے

یاد ہے شادی میں بھی، ہنگامۂ “یارب”، مجھے یاد ہے شادی میں بھی، ہنگامۂ “یارب”، مجھے سُبحۂ زاہد ہوا ہے، خنده زیرِ لب مجھے ہے…

ادامه مطلب

ہے وصل ہجر عالمِ تمکین و ضبط میں

ہے وصل ہجر عالمِ تمکین و ضبط میں ہے وصل ہجر عالمِ تمکین و ضبط میں معشوقِ شوخ و عاشقِ دیوانہ چاہیے اُس لب سے…

ادامه مطلب

ہندوستان سایۂ گل پائے تخت تھا

ہندوستان سایۂ گل پائے تخت تھا ہندوستان سایۂ گل پائے تخت تھا جاہ و جلال عہدِ وصالِ بتاں نہ پوچھ ہر داغِ تازہ یک دلِ…

ادامه مطلب

ہجومِ نالہ، حیرت عاجزِ عر ضِ یک افغاں ہے

ہجومِ نالہ، حیرت عاجزِ عر ضِ یک افغاں ہے ہجومِ نالہ، حیرت عاجزِ عر ضِ یک افغاں ہے خموشی ریشۂ صد نیستاں سے خس بدنداں…

ادامه مطلب

نہ لیوے گر خسِ جَوہر طراوت سبزہ خط سے

نہ لیوے گر خسِ جَوہر طراوت سبزہ خط سے نہ لیوے گر خسِ جَوہر طراوت سبزہ خط سے لگا دے خانۂ آئینہ میں رُوئے نگار…

ادامه مطلب

نالے دل کھول کے دو چار کروں یا نہ کروں

نالے دل کھول کے دو چار کروں یا نہ کروں نالے دل کھول کے دو چار کروں یا نہ کروں یہ بھی اے چرخِ ستمگار!…

ادامه مطلب

مہرباں ہو کے بلالو مجھے، چاہو جس وقت

مہرباں ہو کے بلالو مجھے، چاہو جس وقت مہرباں ہو کے بلالو مجھے، چاہو جس وقت میں گیا وقت نہیں ہوںکہ پھر آ بھی نہ…

ادامه مطلب

مرثیہ

مرثیہ ہاں! اے نفسِ بادِ سحر شعلہ فشاں ہو اے دجلۂ خوں! چشمِ ملائک سے رواں ہو اے زمزمۂ قُم! لبِ عیسیٰ پہ فغاں ہو…

ادامه مطلب

لبِ عیسیٰ کی جنبش کرتی ہے گہوارہ جنبانی

لبِ عیسیٰ کی جنبش کرتی ہے گہوارہ جنبانی لبِ عیسیٰ کی جنبش کرتی ہے گہوارہ جنبانی قیامت کشتۂٴ لعل بتاں کا خواب سنگیں ہے

ادامه مطلب

گلشن میں بند وبست بہ رنگِ دگر ہے آج

گلشن میں بند وبست بہ رنگِ دگر ہے آج گلشن میں بند وبست بہ رنگِ دگر ہے آج قمری کا طوق حلقۂ بیرونِ در ہے…

ادامه مطلب

کی وفا ہم سے تو غیر اِس [1] کو جفا کہتے ہیں

کی وفا ہم سے تو غیر اِس [1] کو جفا کہتے ہیں ہوتی آئی ہے کہ اچھوں کو برا کہتے ہیں آج ہم اپنی پریشانیِ…

ادامه مطلب

کعبے میں جا رہا، تو نہ دو طعنہ، کیا کہیں

کعبے میں جا رہا، تو نہ دو طعنہ، کیا کہیں کعبے میں جا رہا، تو نہ دو طعنہ، کیا کہیں بھولا ہوں حقِّ صحبتِ اہلِ…

ادامه مطلب

قصائد

قصائد منقبتِ حیدری سازِ یک ذرّہ نہیں فیضِ چمن سے بیکار سایۂ لالۂ بےداغ سویدائے بہار مستیِ بادِ صبا سے ہے بہ عرضِ سبزہ ریزۂ…

ادامه مطلب

عشق تاثیر سے نومید نہیں

عشق تاثیر سے نومید نہیں عشق تاثیر سے نومید نہیں جاں سپاری شجرِ بید نہیں سلطنت دست بَدَست آئی ہے جامِ مے خاتمِ جمشید نہیں…

ادامه مطلب

ضبط سے مطلب بجز وارستگی دیگر نہیں

ضبط سے مطلب بجز وارستگی دیگر نہیں ضبط سے مطلب بجز وارستگی دیگر نہیں دامنِ تمثال آبِ آئنہ سے تر نہیں ہوتے ہیں بے قدر…

ادامه مطلب

شفق بدعوۂ عاشق گواہِ رنگیں ہے

شفق بدعوۂ عاشق گواہِ رنگیں ہے شفق بدعوۂ عاشق گواہِ رنگیں ہے کہ ماہ دزدِ حنائے کفِ نگاریں ہے کرے ہے بادہ، ترے لب سے،…

ادامه مطلب

سکوت و خامشی اظہارِ حالِ بے زبانی ہے

سکوت و خامشی اظہارِ حالِ بے زبانی ہے سکوت و خامشی اظہارِ حالِ بے زبانی ہے کمینِ درد میں پوشیدہ رازِ شادمانی ہے عیاں ہیں…

ادامه مطلب

زبسکہ مشقِ تماشا جنوں علامت ہے

زبسکہ مشقِ تماشا جنوں علامت ہے زبسکہ مشقِ تماشا جنوں علامت ہے کشاد و بستِ مژہ، سیلیِ ندامت ہے نہ جانوں، کیونکہ مٹے داغِ طعنِ…

ادامه مطلب

دیکھ کر در پردہ گرمِ دامن افشانی مجھے

دیکھ کر در پردہ گرمِ دامن افشانی مجھے دیکھ کر در پردہ گرمِ دامن افشانی مجھے کر گئی وابستۂ تن میری عُریانی مجھے بن گیا…

ادامه مطلب

دلِ ناداں تجھے ہوا کیا ہے

دلِ ناداں تجھے ہوا کیا ہے دلِ ناداں تجھے ہوا کیا ہے؟ آخر اس درد کی دوا کیا ہے؟ ہم ہیں مشتاق اور وہ بےزار…

ادامه مطلب

خود جاں دے کے روح کو آزاد کیجیے

خود جاں دے کے روح کو آزاد کیجیے خود جاں دے کے روح کو آزاد کیجیے تاکے خیالِ خاطرِ جلّاد کیجیے بھولے ہوئے جو غم…

ادامه مطلب

حسنِ بے پروا خریدارِ متاعِ جلوہ ہے

حسنِ بے پروا خریدارِ متاعِ جلوہ ہے حسنِ بے پروا خریدارِ متاعِ جلوہ ہے آئنہ زانوئے فکرِ اختراعِ جلوہ ہے تا کُجا اے آگہی رنگِ…

ادامه مطلب

جنوں تہمت کشِ تسکیں نہ ہو گر شادمانی کی

جنوں تہمت کشِ تسکیں نہ ہو گر شادمانی کی جنوں تہمت کشِ تسکیں نہ ہو گر شادمانی کی نمک پاشِ خراشِ دل ہے لذّت زندگانی…

ادامه مطلب

تضمین بر غزل بہادر شاہ ظفر

تضمین بر غزل بہادر شاہ ظفر گھستے گھستے پاؤں کی زنجیر آدھی رہ گئی مر گئے پر قبر کی تعمیر آدھی رہ گئی سب ہی…

ادامه مطلب

پا بہ دامن ہو رہا ہوں بسکہ میں صحرا نورد

پا بہ دامن ہو رہا ہوں بسکہ میں صحرا نورد پا بہ دامن ہو رہا ہوں بسکہ میں صحرا نورد خارِ پا ہیں جوہرِ آئینۂ…

ادامه مطلب

بہ رہنِ شرم ہے با وصفِ شوخی اہتمام اس کا

بہ رہنِ شرم ہے با وصفِ شوخی اہتمام اس کا بہ رہنِ شرم ہے با وصفِ شوخی اہتمام اس کا نگیں میں جوں شرارِ سنگ…

ادامه مطلب

بدتر از ویرانہ ہے فصلِ خزاں میں صحنِ باغ

بدتر از ویرانہ ہے فصلِ خزاں میں صحنِ باغ بدتر از ویرانہ ہے فصلِ خزاں میں صحنِ باغ خانۂ بلبل بغیر از خندۂ گل بے…

ادامه مطلب

اِن سیم کے بِیجوں کو کوئی کیا جانے

اِن سیم کے بِیجوں کو کوئی کیا جانے اِن سیم کے بِیجوں کو کوئی کیا جانے بھیجے ہیں جو اَرمُغاں شہِ والا نے گِن کر…

ادامه مطلب

اِس کتابِ طرب نصاب نے جب

اِس کتابِ طرب نصاب نے جب اِس کتابِ طرب نصاب نے جب آب و تاب انطباع کی پائی فکرِ تاریخِ سال میں، مجھ کو ایک…

ادامه مطلب

یاد ہے شادی میں بھی، ہنگامۂ یارب، مجھے

یاد ہے شادی میں بھی، ہنگامۂ یارب، مجھے یاد ہے شادی میں بھی، ہنگامۂ “یارب”، مجھے سُبحۂ زاہد ہوا ہے، خندہ زیرِ لب مجھے ہے…

ادامه مطلب

ہیں شہ میں صفاتِ ذوالجلالی باہم

ہیں شہ میں صفاتِ ذوالجلالی باہم ہیں شہ میں صفاتِ ذوالجلالی باہم آثارِ جلالی و جمالی باہم ہوں شاد نہ کیوں سافل و عالی باہم…

ادامه مطلب

ہم گر چہ بنے سلام کرنے والے

ہم گر چہ بنے سلام کرنے والے ہم گر چہ بنے سلام کرنے والے کرتے ہیں دِرنگ، کام کرنے والے کہتے ہیں کہیں خدا سے،…

ادامه مطلب

ہجومِ نالہ، حیرت عاجزِ عرضِ یک افغاں ہے

ہجومِ نالہ، حیرت عاجزِ عرضِ یک افغاں ہے ہجومِ نالہ، حیرت عاجزِ عرضِ یک افغاں ہے خموشی ریشۂ صد نیستاں سے خس بدنداں ہے تکلف…

ادامه مطلب

نہ حیرت چشمِ ساقی کی، نہ صحبت دورِ ساغر کی

نہ حیرت چشمِ ساقی کی، نہ صحبت دورِ ساغر کی نہ حیرت چشمِ ساقی کی، نہ صحبت دورِ ساغر کی مری محفل میں غالبؔ گردشِ…

ادامه مطلب

نالہ جُز حسنِ طلب، اے ستم ایجاد نہیں

نالہ جُز حسنِ طلب، اے ستم ایجاد نہیں نالہ جُز حسنِ طلب، اے ستم ایجاد نہیں ہے تقاضائے جفا، شکوۂ بیداد نہیں عشق و مزدوریِ…

ادامه مطلب

منظور تھی یہ شکل تجلّی کو نور کی

منظور تھی یہ شکل تجلّی کو نور کی منظور تھی یہ شکل تجلّی کو نور [1] کی قسمت کھلی ترے قد و رخ سے ظہور…

ادامه مطلب

مدحِ سوم شاہ

مدحِ سوم شاہ ہاں مہِ نو سنیں ہم اس کا نام جس کو تو جھک کے کر رہا ہے سلام دو دن آیا ہے تو…

ادامه مطلب

لبِ عیسیٰ کی جنبش کرتی ہے گہواره جنبانی

لبِ عیسیٰ کی جنبش کرتی ہے گہواره جنبانی لبِ عیسیٰ کی جنبش کرتی ہے گہواره جنبانی قیامت کشتۂٔ لعل بتاں کا خواب سنگیں ہے

ادامه مطلب

گزارش مصنّف بحضورِ شاہ

گزارش مصنّف بحضورِ شاہ اَے شَہنشاہِ آسماں اَورنگ اَے جہاندارِ آفتاب آثار تھا میں اِک بے نَوَائے گوشہ نشیں تھا میں اِک درد مندِ سینہ…

ادامه مطلب

کوئی دن گر زندگانی اور ہے

کوئی دن گر زندگانی اور ہے کوئی دن گر زندگانی اور ہے اپنے جی میں ہم نے ٹھانی اور ہے آتشِ دوزخ میں یہ گرمی…

ادامه مطلب

کسی کو دے کے دل کوئی نوا سنجِ فغاں کیوں ہو

کسی کو دے کے دل کوئی نوا سنجِ فغاں کیوں ہو کسی کو دے کے دل کوئی نوا سنجِ فغاں کیوں ہو نہ ہو جب…

ادامه مطلب

قطرہ مے بس کہ حیرت سے نفس پرور ہوا

قطرہ مے بس کہ حیرت سے نفس پرور ہوا قطرہ مے بس کہ حیرت سے نفس پرور ہوا خطِّ جامِ مے سراسر رشتۂ گوہر ہوا…

ادامه مطلب

عشق سے طبیعت نے زیست کا مزا پایا

عشق سے طبیعت نے زیست کا مزا پایا درد کی دوا پائی، درد بے دوا پایا غنچہ پھر لگا کھلنے، آج ہم نے اپنا دل…

ادامه مطلب

صفائے حیرت آئینہ ہے سامانِ زنگ آخر

صفائے حیرت آئینہ ہے سامانِ زنگ آخر صفائے حیرت آئینہ ہے سامانِ زنگ آخر تغیر ” آبِ برجا ماندہ” کا پاتا ہے رنگ آخر نہ…

ادامه مطلب

شبنم بہ گلِ لالہ نہ خالی زادا ہے

شبنم بہ گلِ لالہ نہ خالی زادا ہے شبنم بہ گلِ لالہ نہ خالی زادا ہے داغِ دلِ بے درد، نظر گاهِ حیا ہے دل…

ادامه مطلب

سرچشمه ی خونست زدل تا به زبان های

سرچشمه ی خونست زدل تا به زبان های دارم سخنی با تو و گفتن نتوان های سیرم نتوان کرد ز دیدار نکویان نظاره بود شبنم…

ادامه مطلب

رونے سے اور عشق میں بےباک ہو گئے

رونے سے اور عشق میں بےباک ہو گئے رونے سے اور عشق میں بےباک ہو گئے دھوئے گئے ہم ایسے کہ بس پاک ہو گئے…

ادامه مطلب

دیکھ کر در پرده گرمِ دامن افشانی مجھے

دیکھ کر در پرده گرمِ دامن افشانی مجھے دیکھ کر در پرده گرمِ دامن افشانی مجھے کر گئی وابستۂ تن میری عُریانی مجھے بن گیا…

ادامه مطلب

دل لگا کر لگ گیا اُن کو بھی تنہا بیٹھنا

دل لگا کر لگ گیا اُن کو بھی تنہا بیٹھنا دل لگا کر لگ گیا اُن کو بھی تنہا بیٹھنا بارے اپنی بے کسی کی…

ادامه مطلب

خود پرستی سے رہے باہم دِگر نا آشنا

خود پرستی سے رہے باہم دِگر نا آشنا خود پرستی سے رہے باہم دِگر نا آشنا بے کسی میری شریکِ آئینہ تیرا آشنا آتشِ موئے…

ادامه مطلب